جامعہ این ای ڈی کے تحت انتیسویں سالانہ جلسہ تقسیمِ اسناد(2020)

0
894

سستے وینٹی لیٹرز،جامعہ این ای ڈی کا کارنامہ ہیں،چانسلر/گورنرسندھ
جامعہ این ای ڈی اورا س کے تھر کیمپس کا کام قابل تحسین ہے،پروچانسلر
انجینئرزکا مستقبل، ملک و قوم کا مستقبل،بطورایلمنائی جامعہ سے وابستگی رکھیں، ترک کونسل جزل
کووڈ کے پیشِ نظرطالب علموں کو ساڑھے پندرہ کروڑ کی اسکالر شپس دیں،شیخ الجامعہ
کراچی:(اسٹاف رپورٹر) جامعہ این ای ڈی صوبے کی عظیم جامعہ ہے جو کہ ناصرف تعلیمی بلکہ ملکی ترقی میں بھی کردار ادا کررہی ہے،کووڈ 19کی سنگین صورتِ حال کے پیش نظر وینٹی لیٹر پر اس جامعہ نے کام کیا جس سے ملک کو استفادہ ہورہا ہے، وزیر اعظم کے’کامیاب جوان پروگرام‘ کا مقصد اپنے نوجوانوں کو اس قابل بنانا ہے کہ وہ نوکری ڈھونڈنے کے بجائے نوکری دینے والے بن جائیں۔یہ بات قابلِ فخر ہے کہ آپ سو برس سے انجینئرز تخلیق کرنے والی ملک کی مایہ ناز یونی ورسٹی سے پاس آؤٹ ہورہے ہیں،جو انجینئرنگ کی دنیا میں اپنا منفرد مقام رکھتی ہے، تعلیمی اداروں میں کوالٹی ایجوکیشن اور تحقیق کے ذریعے دنیا سے مقابلہ کیا جاتا ہے اور جامعہ این ای ڈی اورا س کا تھر کیمپس اس حوالے سے بہترین کام کررہا ہے۔آپ کا مستقبل،آپ کے ملک اورآپ کی قوم کا مستقبل ہے، خود کومحدود نہ کریں بلکہ مختلف آپشنزخود پر کھلے رکھیے، آپ ایلمنائی کی حیثیت سے اپنی جامعہ سے وابستگی رکھیں۔ ادارے سے وابستہ اور سابقہ ہر فرد کا شکریہ جنہوں نے جامعہ این ای ڈی کو ترقی کی راہوں پر گامزن رکھا،،کووڈ کے اس دور میں طالب علموں کے حالات کے پیشِ نظر ہم نے ساڑھے پندرہ کروڑ کی اسکالر شپس دیں۔ان خیالات کا اظہار گورنر سندھ عمران اسماعیل، ترک کونسل جزل تلگا اوجیک اور شیخ الجامعہ این ای ڈی پروفیسر ڈاکٹر سروش حشمت لودھی نے جامعہ این ای ڈی کے تحت انتیسویں سالانہ جلسہ تقسیمِ اسناد2020میں کیا۔ تفصیلات کے مطابق گورنر/ چانسلر جامعات عمران اسماعیل کا کہنا تھا کہ جامعہ این ای ڈی صوبے کی عظیم جامعہ ہے جو کہ ناصرف تعلیمی بلکہ ملکی ترقی میں بھی کردار ادا کررہی ہے۔کووڈ 19کی سنگین صورتِ حال کے پیش نظر وینٹی لیٹر پر اس جامعہ نے کام کیا جس سے ملک کو استفادہ ہورہا ہے،انجینئرطالبات کے لیے پیغام دیتے ہوئے اُن کا کہناتھا کہ والدین کی طرح ملک بھی آپ کو تناور درخت کی طرح دیکھنا چاہتا ہے، ملک آپ پر انوسٹ کررہا ہے تو شادی کے بعد بھی اپنی پیشہ وارانہ ذمے داری کو ضرور نبھائیں۔کووڈ کی وجہ سے آن لائن کانووکیشن کا انعقاد ضروری ہے، صورت حال سب کے سامنے ہے۔وزریراعظم کو نوجوانوں سے بہت اُمیدیں ہیں،اسی لیے انہوں نے ’کامیاب جوان پروگرام‘کا آغاز کیاجس کے تحت نوجوان ڈھائی کروڑ تک کا قرضہ حاصل کرسکتے ہیں،اس کا مقصد اپنے نوجوانوں کو اس قابل بنانا ہے کہ وہ نوکری ڈھونڈنے کے بجائے نوکری دینے والے بن جائیں۔انہوں نے مزید کہا کہ ڈاکٹر سروش لودھی اور ان کی ٹیم کو مبارک باد دیتا ہوں جو بہترین انداز سے جامعہ چلارہے ہیں۔پرو چانسلر جامعات نثار احمد کھوڑو کا کہنا تھاکہ یہ بات قابلِ فخر ہے کہ آپ سو برس سے انجینئرز تخلیق کرنے والی ملک کی مایہ ناز یونی ورسٹی سے پاس آؤٹ ہورہے ہیں، جو انجینئرنگ کی دنیا میں اپنا منفرد مقام رکھی ہے۔تعلیمی اداروں میں کوالٹی ایجوکیشن اور تحقیق کے ذریعے دنیا سے مقابلہ کیا جاتا ہے اور جامعہ این ای ڈی اورا س کا تھر کیمپس اس حوالے سے بہترین کام کررہا ہے،سندھ نے یونی ورسٹیز ایکٹ منظور کیا جس کے بعد اب سندھ میں 25سے زائد پبلک یونی ورسٹیز کام کررہی ہیں، سندھ نے ہائر ایجوکیشن سستی کی جو کہ پوری دنیا میں مہنگی ہوتی ہے، یہ اقدامات سندھ حکومت کے تعلیم کی بہتری کی جانب بہترین اقدامات ہیں۔آپ کا مستقبل،آپ کے ملک اورآپ کی قوم کا مستقبل ہے۔بحیثیت طالب علم،انسان تمام زندگی اپنی جامعہ سے وابستہ رہتا ہے، آپ ایسی یونی ورسٹی سے فارغ ہورہے ہیں جو 100 برس سے پیشہ وارانہ تعلیم دے رہی ہے تو آپ پر فرض ہے کہ آپ ایلمنائی کی حیثیت سے اپنی جامعہ سے وابستگی رکھیں۔جب میں نے 1999میں بین الاقوامی تعلقات سے ماسٹرز کیا تو دو آپشن ٹیچنگ اور سفارت کاری سامنے تھے،آج جس جگہ ہوں اس کی وجہ یہ ہے کہ میں دونوں آپشنز کا استعمال کیا، اس بات سے یہ بتانا مقصود ہے کہ خود کومحدود نہ کریں بلکہ مختلف آپشنزخود پر کھلے رکھیں۔ جامعہ این ای ڈی کے جلسہ تقسیم اسناد کی ِصدارت چانسلر/گورنر سندھ عمران اسماعیل،ترک کونسل جزل تلگا اوجیک نے بطور مہمانِ خصوصی آن لائن پیغام دیاجب کہ ایڈوائزٹو یونی ورسٹیز اینڈ بورڈز /پروچانسلر نثار احمد کھوڑونے کانووکیشن سے خطاب کیا۔استقبالیہ سے خطاب کرتے ہوئے شیخ الجامعہ پروفیسر ڈاکٹر سروش حشمت لودھی نے کہا کہ جامعہ این ای ڈی کو اس سال سو برس مکمل ہوئے ہیں،ا س موقعے پر اس ادارے سے وابستہ اور سابقہ ہر فرد کا شکریہ جنہوں نے ادارے کو ترقی کی راہوں پر گامزن رکھا۔کووڈکے سنگین دورمیں بھی ہماری کوشش رہی کہ یونی ورسٹی نظم وضبط کو برقرار رکھیں۔کووڈ کے اس دور میں طالب علموں کے حالات کے پیشِ نظر ہم نے ساڑھے پندرہ کروڑ کی اسکالر شپس دیں۔ اس جلسہ تقسیم اسناد 2020میں 9طالب علموں کو ڈاکٹریٹ کی سندتفویض کی گئی۔2020 کے پاس آؤٹ گریجویٹس 2079اور ماسٹرزکے طالب علموں کی تعداد 729ہے.

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here