سرسید یونیورسٹی نے بوائز اور کراچی یونیورسٹی نے گرلز کا ٹائٹل جیت لیا.

0
234
پروفیسر ڈاکٹر ولی الدین (وائس چانسلر سر سید یونیورسٹی) مہمان خصوصی پروفیسر اعجاز فاروقی کو سوینئر پیش کرتے ہوئے. سید سرفراز علی( رجسٹرار) قاضی نصر عباس اور مبشر مختار بھی موجود ہیں۔


وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر ولی الدین کا سرسید یونیورسٹی کی بوائز اور گرلز کی ٹیموں کے ساتھ گروپ۔ سید سرفراز علی، ڈاکٹر عقیل الرحمان، قاضی نصر عباس، مبشر مختار اور جاوید اقبال بیگ بھی موجود ہیں۔

سرسید یونیورسٹی نے بوائز اور کراچی یونیورسٹی نے گرلز کا ٹائٹل جیت لیا.
سر سید یونیورسٹی کے زیر اہتمام پاکستان ڈے انٹر یونیورسٹی ٹگ آف وار ٹورنامنٹ کا انعقاد 31مارچ کو سرسید یونیورسٹی کے گراؤنڈ میں کیا گیا جس میں 8 یونیورسٹیوں نے گرلز کے ایونٹ میں اور 9 یونیورسٹیوں نے بوائز کے ایونٹ میں حصہ لیا۔
ٹوڑنامنٹ کا افتتاح مہمان خصوصی پروفیسر اعجاز فاروقی (سابق صدر کے سی سی اے) نے کیا۔
بوائز کے فائنل میچ میں سرسید یونیورسٹی نے ہمدرد یونیورسٹی کو دو صفر سے جبکہ گرلز کے فائنل میچ میں کراچی یونیورسٹی نے سر سید یونیورسٹی کو دو صفر سے ہرا کر ٹرافی اپنے نام کی۔ بوائز کے ایونٹ میں تیسری پوزیشن سندھ مدرسۃ الاسلام اور گرلز کے ایونٹ میں تیسری پوزیشن ہمدرد یونیورسٹی نے حاصل کی۔ ٹورنامنٹ میں ٹیکنیکل آفیشلز کے فرائض سندھ ٹگ آف وار ایسوسی ایشن سے وابستہ آفیشلز نے سر انجام دیے۔
بوائز کے ایونٹ کے ٹورنامنٹ ڈائریکٹر ڈاکٹر نصرت حسین اور گرلز کہ ایونٹ کی ٹورنامنٹ ڈائریکٹر کے فرائض رفعت جہاں نے سر انجام دیے ان کے ساتھی ٹیکنیکل آفیشلز میں عمر شاہین، فرحان، یاور عباس، طارق، ثناءاللہ، عمیرا صدیقی، خالدہ افتخار، صبا اور عائشہ شامل تھیں۔
فائنل کے اختتام پر وائس چانسلر پروفیسر ولی الدین نے انعامات تقسیم کیے انہوں نے اپنے خطاب میں تمام شرکاء کا شکریہ ادا کیا اور سرسید یونیورسٹی کے اسپورٹس ڈیپارٹمنٹ کو سراہا کہ اسپورٹس ڈیپارٹمنٹ نے اپنی محنت اور لگن سے ایک نہایت ہی شاندار ایونٹ منعقد کیا۔ انہوں نے اسپورٹس ڈیپارٹمنٹ کے لیے تعریفی اسناد اور کیش ایوارڈ کا بھی اعلان کیا۔ اختتامی تقریب کے دیگر معزز مہمانان گرامی میں ڈاکٹر عقیل الرحمان، ڈاکٹر محمد عامر، ڈاکٹر شبر زیدی، جناب منعاف اڈوانی، ڈاکٹر عمران، قاضی نصر عباس، گل فراز احمد خان، عظمت پاشا اور انجینئر محفوظ الحق شامل تھے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here